قازقستان میں چین کے تھینک ٹینک کے اہم رکن نے واضح کیا ہے کہ قازقستان امریکا اور چین کے درمیان کورونا پر ہونے والی کشیدگی پر الگ رہنا چاہتا ہے وہ نہیں چاہتا کہ وہ اس صورتحال میں کسی بھی فریق کا حصہ بنے۔

ماسکو کے ایک آن لائن گروپ کی جانب منعقد ہونے والے مباحثے میں یہ واضح کیا گیا ہے کہ امریکا اور چین کے درمیان کورونا پر تصادم شدت اختیا کرچکا ہے،اور انکے درمیان مشتقبل میں ایسی ہی صورتحال انتقامی طریقہ کار میں شامل ہوسکتی ہے جس سے دونوں ممالک کو ہی نہیں بلکہ دنیا کے دیگر ممالک کو بھی خطرات لاحق ہوسکتے ہیں

 

ماسکو کے والدہائی ڈسکشن کلب نے آن لائن کانفرنس کی میزبانی کی جہاں قازقستان میں واقع “چین سنٹر” تھنک ٹینک کے ڈائریکٹر عادل کوکینوف نے کہا کہ “ہم پہلے ہی دباؤ کا شکار ہیں۔

مجھے یاد دلاتا ہے کہ امریکی وزیر خارجہ مائک پومپیو کے قازقستان کے دورے کے دوران ، وہ امریکہ اور قازق تعلقات کی بات نہیں کررہے تھے ، بلکہ واشنگٹن اور بیجنگ کے تعلقات ، جو خود بھی بہت علامتی ہیں۔

Related News Items:

The Will of God and The United states!

US should reduce defence spendings amid coronavirus crisis, think tank argues

US-China Row Over Pandemic at high , Think tank

CGTN Think Tank analyzes China’s post COVID-19 economic recovery

چین کے مرکز کے نمائندے نے متنبہ کیا کہ قازق معاشرے میں کچھ پسماندہ عناصر اپنے ہمسایہ ممالک کے ساتھ ملک کے تاریخی اعتبار سے مضبوط تعلقات کو خراب کرنے کے لئے وبائی مرض کو ایک آلے کے طور پر استعمال کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

 

ماہر نے مزید کہا کہ اس کے روایتی شراکت داروں اور پڑوسی ممالک مثلا China چین اور روس کے ساتھ اچھے تعلقات برقرار رکھنا قازقستان کی جغرافیائی سیاسی ترجیح ہے۔

 

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے مطابق زیر غور ورژن میں سے ایک یہ ہے کہ یہ صوبہ ہوبی کے چینی شہر ووہان کی ایک لیبارٹری میں تیار کیا گیا تھا جہاں سے گذشتہ دسمبر میں سانس کی غیر معمولی بیماری کی پہلی اطلاعات سامنے آئیں۔ امریکی صدر نے چین کو دھمکی دی ہے کہ اگر اس کا پتہ چل گیا کہ بیجنگ نے جان بوجھ کر وائرس کو لیب سے باہر نہیں جانے دیا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here